جنید جمشید خصوصی شمارہ

Harf e awwal

اہلِ ھویٰ تھے جن سے ہراساں کہاں گئے
رشکِ جبال صاحبِ ایماں کہاں گئے
مردے بھی زندہ ہو گئے جن کی صداؤں سے
وہ اہلِ سوز و ساز ھُدی خواں کہاں گئے
تاریکیوں سے جنگ رہا جن کا مشغلہ
تھے جو زمیں پہ مہر بداماں کہاں گئے
دنیا بغیر ان کے بیاباں سے کم نہیں
جانِ چمن وہ رشکِ گلستاں کہاں گئے


دو ٹانگوں والے جانوروں کی کمی نہیں
انسانیت پسند وہ انساں کہاں گئے
تھی روح جن کی نفس پہ غالب وہ شہسوار
تھی شیطنت بھی جن سے پریشاں کہاں گئے
جرات کے وہ جبال، عزیمت پسند لوگ 
مشکل جنہوں نے کر دیا آساں کہاں گئے
ہیں دعوے دارِ مذہبِ اسلام بے شمار
لیکن سوال یہ ہے مسلماں کہاں گئے
عقبیٰ ہی جن کی منزلِ مقصود تھی اثرؔ 
دنیا میں تھے جو صورتِ مہماں کہاں گئے