Kahanian2

 زندگی کے کسی نہ کسی  موڑ پر  اچانک کچھ سنہری الفاظ نکل کر آپ کے سامنے آجاتے ہیں آپ کے رہنما بن جاتے ہیں۔  کچھ ایسے ہی الفاظ لیے یہ انمول کہانیاں  اس Category   میں پیشِ خدمت ہیں۔ 


arrownew e0ام امینہ بدریہ کی ایمان افروز داستان قبول اسلام انہی کی زبانی سنیے۔ وہ کہتی ہیں کہ میرے والد کا تعلق تھائی لینڈ سے تھا۔ وہ پیدائشی لحاظ سے مسلمان تھے لیکن عملی طور پر ان کا اسلام سے کوئی تعلق نہ تھا۔ جبکہ میری والدہ بدھ مت تھیں اور والد صاحب سے شادی کے وقت مسلمان ہوئی تھیں۔ وہ دونوں بعدمیں آسٹریلیا آ کر آباد ہو گئے تھے۔ میرا پیدائشی نام ( ٹے نی تھیا ) Tanidthea تھا۔ میں نے یونیورسٹی آف نیوانگلینڈ، آرمیڈیل سے ایم اے اکنامکس کیا اور بزنس مارکیٹنگ اور ہیومن ریسورسز کے مضامین پڑھے۔ پھر میں بطور ٹیوٹر پڑھانے لگی۔ اسی اثناءمیں شادی ہو گئی شادی اسلامی قانون کے مطابق ہوئی۔ میرے شوہر کمپیوٹر گرافکس ڈیزائنر تھے۔ وہ شادی کے وقت مسلمان ہوئے تھے لیکن نام کے مسلمان تھے۔ اسلام پر ہرگز عامل نہیں تھے۔
میرے باپ بھی نام کے مسلمان تھے اور انہیں دین کے بارے میں کچھ معلوم نہ تھا نہ انہوں نے ہمیں کچھ بتایا۔ یہی وجہ تھی کہ ہم بھی دین سے مکمل طور پر عاری تھے۔ میں کسی مذہب پر یقین نہیں رکھتی تھی۔ اللہ مجھے معاف کرے، میں ملحد تھی۔ میں جب اپنے شوہر کے ساتھ تقریباً ڈیڑھ سال کا عرصہ گزار چکی تو ایک وقت مجھ پر ایسا آیا کہ دنیا سے میرا دل اچاٹ ہو گیا اور میں پریشانی کی حالت میں تھی۔

arrownew e0دروازے پر آہستہ انداز میں دستک ہوئی․․․زکریا نے چونک کر دروازے کی طرف دیکھا․․․وہ اس وقت اپنے گھر کے صحن میں تھا۔گھر کے باقی افراد اندرونی حصے میں تھے․․․․آہستہ دستک دینے کا مطلب تھا،آنے والا نہیں چاہتا کہ اس کے آنے کی کسی کو خبر ہو۔
وہ دبے پاؤں اٹھا اور کچھ بولے بغیر دروازہ کھول دیا․․․باہر زابل کے والد کھڑے تھے․․․اس نے انہیں وہیں ٹھہرنے کا اشارہ کیا اور اندر آکر ڈرائینگ روم کا دروازہ کھول دیا․․․دوسرے ہی لمحے زابل کے والد توقیر اندر آگئے․․․انہوں نے دبی آواز میں کہا:
”السلام علیکم بیٹا زکریا۔‘‘
’’وعلیکم السلام رحمتہ اللہ وبرکاتہُ․․․ چچا جان!میں آپ کا ہی انتظار کر رہا تھا۔مجھے آپ کا موبائل پر پیغام مل گیا تھا۔“
”شکریہ!اصل میں تمہیں تو پتا ہے․․بیٹا․․․زابل کا تمہارے بڑے دونوں بھائیوں سے کس قدر گہرانہ دوستانہ ہے․․․ہے ناں۔“

اس کا سر جھکا ہوا تھا۔ سر سلیم اسے ڈانٹ رہے تھے۔
”آخر کب سمجھو گئے تم؟ اب تم کوئی بچے نہیں رہے آٹھویں جماعت میں پڑھ رہے ہو۔ میں تو تنگ آگیا ہوں تم سے۔ پڑھتے نہیں تو اسکول کس لئے آتے ہو؟“
اس کا سرشرم سے جھکا ہوا تھا۔

سر سلیم نے پھر کہا:”چلو جاو یہاں سے۔ اگر آئندہ ٹیسٹ میں تمھارے نمبرکم آئے تو مجھ سے برا کوئی نہ ہو گا۔ سمجھے؟“
پھر وہ تھکے تھکے قدموں سے چلتا ہوا اپنی سیٹ پر بیٹھ گیا۔
”امجد! میں نے تمھیں کل ہی سمجھایا تھا کہ سبق یاد کرکے آنا، لیکن تم سنتے ہی نہیں۔

ایک طالب علم کو استاد نے امتحان میں فیل کردیا ۔ طالب علم شکایت لے کر پرنسپل کے پاس چلا گیا کہ مجھے غلط فیل کیا گیا ہے۔ پرنسپل نے استاد اور طالب علم دونوں کو بلا لیا اور استاد سے فیل کرنے کی وجہ پوچھی استاد صاحب نے بتایا کہ اس لڑکے کو فیل کرنے کی وجہ یہ تھی کہ وہ ہمیشہ موضوع سے باہر نکل جاتا ہے جس موضوع پر اسے مضمون لکھنے کو دیا جائے اسے چھوڑ کر اپنی پسند کے مضمون پر چلا جاتا ہے۔

پرنسپل نے کوئی مثال پوچھی تو استاد صاحب نے بتایا کہ ایک دفعہ میں نے اسے بہار پر مضمون لکھنے کو کہا تو وہ اس نے کچھ اس طرح لکھا ۔

وہ سخت گرمیوں کی ایک شام تھی بی گلہری کا گھر بوڑھے برگد میں تھا اور اس کے تمام ننھے منے بچے اپنے سونے والے کمرے میں موجود تھے، اگرچہ اُن کے سونے کا وقت کب کا ہوچکا تھا لیکن وہ ابھی تک جاگ رہے تھے۔

نمو بی گلہری کا سب سے چھوٹا بچہ تھا وہ اپنے بستر پر اچھل کود رہا تھا۔ وہ کہنے لگا” مجھے نیند بالکل نہیںآ رہی ہے۔ ابھی باہر تھوڑی روشنی دکھائی دے رہی ہے۔ میں تو ابھی کھیلنا چاہتا ہوں“ دوسروں نے منہ پر انگلی رکھ کر اُسے چپ رہنے کو کہا اور سرگوشی سے اُسے کہنے لگے”اتنا اونچا نہ بولو ورنہ اماں سن لیں گی تو ہم سب مشکل میں پڑجائیں گے“ لیکن نمونے اُن کی نصیحت پر کان دھرنے کی بجائے ہنسنا شروع کردیا اور زور سے بستر پر اُچھلنا کودنا شروع کردیا ۔

ﺩﻓﺘﺮ ﮐﮯ ﭘﯽ ﺍﮮ ﻧﮯ ﺍﻃﻼﻉ ﺩﯼ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺻﺎﺣﺐ ﺍٓﭖ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﻼﻟﯿﺎ۔ﻣﻼﻗﺎﺗﯽ ﺍﯾﮏ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮﮈ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﻣﻼﺯﻡ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺗﻮﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ ’’ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﺳﯽ ﺍﯾﺲ ﺍﯾﺲ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﻧﻔﺎﺭﻣﯿﺸﻦ ﺳﺮﻭﺱ ﻣﯿﮟ ﺍٓﯾﺎ ﺗﻮ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﺍﻣﯿﺪﯾﮟ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﯿﺎﮞ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﺎ ﺑﮍﮬﺎﭘﺎ ﺍٓﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺟﺎﺋﯿﮕﺎ،ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﺎ ﻓﻠﯿﭧ ﺑﯿﭻ ﮐﺮ ﺭﺍﻭﻟﭙﻨﮉﯼ ﺍٓﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﻭﮦ ﭼﻨﺪ ﺭﻭﺯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍٓﭖ ﮐﮯ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮈﯾﭙﻮﭨﯿﺸﻦ ﭘﺮ ﺍٓﯾﺎ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍٓﭖ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﺒﺎﺩﻟﮧ ﻻﮨﻮﺭ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻻﮨﻮﺭ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﮨﻢ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺲ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ؟ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺑﮩﺖ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﮯ ‘‘ ۔ ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺍٓﮔﺌﯽ ﭼﻨﺪ ﺭﻭﺯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﺍﯾﮏ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺍﻓﺴﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﺍٓﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺑﻨﺎﺀ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻻﮨﻮﺭ ﺗﻌﯿﻨﺎﺗﯽ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻘﻮﻝ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔

ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﮦ ﺻﺎﺣﺐ ‏( ﻣﻼﻗﺎﺗﯽ ‏) ﮐﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺳﮯ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍٓﭖ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﺍٓﭖ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ؟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ’’ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﻮﮞﺎﺳﮯ ﻻﮨﻮﺭ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﺍٓﺑﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ ‘‘ ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ’’ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ﮨﻢ ﺍٓﭘﮑﯽ ﺳﮩﻮﻟﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺍﺳﻼﻡ ﺍٓﺑﺎﺩ ﺗﻌﯿﻨﺎﺕ ﮐﺮﺩﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺗﺒﺎﺩﻟﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍٓﭖ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺳﻔﺎﺭﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ ۔ ﻣﻼﺯﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﺑﺎﺭ ﺗﺒﺎﺩﻟﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺳﮑﺘﮯ۔

شہر آنے سے پہلے ہم لوگ گاؤں چاند پور میں آباد تھے، جہاں سب لوگ پیار ومحبت سے رہتے تھے۔ گاؤں میں ایک بابا جی تھے، جن کی عمر اسی پچاسی سال کے درمیان ہوگی۔ جھکی ہوئی کمر، ہاتھ میں لاٹھی، آنکھوں پر موٹے شیشوں کی عینک ، مگر ان کی ہمت جوانوں جیسی تھی۔ نام تو ان کا بشیر تھا۔ گاؤں میں بابا بیرو کے نام سے مشہور تھے۔ کہتے ہیں بابا بیرو کے والد نے پیدائش سے پہلے یہ منت مانی تھی کہ اگر ان کے ہاں لڑکا ہوا تو وہ ایک درخت لگائیں گے۔ چناں چہ بابابیرو کی پیدائش کے بد انھوں نے اپنی منت پوری کرنے کے لیے گاؤں کے بڑے ٹیلے کے پاس ایک برگد کا درخت ہم عمر تھے۔ ٹیلے کے اوپر بابا بیرو کا کمرا اور اور گھر کے اطراف میں ایک باغیچہ تھا۔ بابابیرو کو پھولوں، پودوں،درختوں اور چڑیوں سے عشق تھا۔ پھول ان کی کم زوری تھے۔